Showing 1–48 of 54 results

  • AAEY EMAAN WALO AAYAAT KI AASAN TAFSIR

    AAEY EMAAN WALO AAYAAT KI AASAN TAFSIR

    PIYAM E EMAAN COURSE

    اے ایمان والو

    پیامِ ایمان کورس

    مفتی مصطفیٰ عزیز

    رابطہ :03345425788

    1,000.001,200.00
  • Aalami Zubano Me Tarajim e Quraan Majeed

    عالمی زبانوں میں تراجم قرآن مجید

    از: مولانا فقیر محمد

    Aalami Zubano Me Tarajim e Quraan Majeed

    By : Maulana Faqeer Muhammad

  • ASAAN TARJUMA QURAAN , URDU MUTARJIM: MAULANA MUHAMMAD FAROOQ KHA’N

    آسان ترجمہ قرآن

    اردو مترجم : مولانا  محمدفاروق خاں

    (برائے تحقیق ومطالعہ طلبائے قرآنیات)

    ASAAN TARJUMA QURAAN

    URDU MUTARJIM: MAULANA MUHAMMAD FAROOQ KHA’N

    (FOR RESEARCH PURPOSES OF STUDENTS OF QURANIC STUDIES)

    مزید کتبِ قرآنیات کے لیئے کلک کیجیئے

  • Contribution of Darul-‘Ulum Deoband to the Development of Tafsir

    Contribution of  Darul-‘Ulum Deoband to the

    Development of  Tafsir

    Submitted to the University of Kashmir

    For  the award of  Master of  Philosophy  (M.Phil)

    In Islamic Studies

    By: Bilal Ahmad Wani

    Under the supervision of

    Prof. (Dr.) Naseem Ahmad Shah

    Shah-i-Hamadan Institute of Islamic Studies

    University of Kashmir, Hazratbal Campus, Srinagar-190006

    June 2012

    MORE FOR TOOBAA FOUNDATION’S BOOK LOVERS

    تفسیر بیان القرآن مولانا اشرف علی تھانوی کا تحقیقی و تنقیدی مطالعہ

    (پی ایچ ڈی مقالہ)

    حضرت حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانویؒ بحیثیت مفسرِ قرآن

    (پی ایچ ڈی مقالہ)

    TAFSEER E USMANI (ENGLISH)

    MAARIF UL QURAAAN (ENGLISH)

  • DHATOUN KA QURANI TASSAWUR AUR QURANI DHATOUN KA KEEMIYAI TAJZIA

    SCIENCE, One of the Islamic world’s most Significant contributions to modern Science was the translation of Mathematical, Medical, and Astronomical texts from their original languages into Arabic, Muslim Contribution in Science, Science in the medieval Islamic world, Science in the medieval Islamic world was the science developed and practised during the Islamic Golden Age under the Umayyads of Córdoba, the Abbadids of Seville, the Samanids, the Ziyarids, the Buyids in Persia, the Abbasid Caliphate and beyond, spanning the period roughly between 786 and 1258. Islamic scientific achievements encompassed a wide range of subject areas, especially astronomy, mathematics, and medicine. Other subjects of scientific inquiry included alchemy and chemistry, botany and agronomy, geography and cartography, ophthalmology, pharmacology, physics, and zoology. Medieval Islamic science had practical purposes as well as the goal of understanding. For example, astronomy was useful for determining the Qibla, the direction in which to pray, botany had practical application in agriculture, as in the works of Ibn Bassal and Ibn al-‘Awwam, and geography enabled Abu Zayd al-Balkhi to make accurate maps. Islamic mathematicians such as Al-Khwarizmi, Avicenna and Jamshīd al-Kāshī made advances in algebra, trigonometry, geometry and Arabic numerals. Islamic doctors described diseases like smallpox and measles, and challenged classical Greek medical theory. Al-Biruni, Avicenna and others described the preparation of hundreds of drugs made from medicinal plants and chemical compounds. Islamic physicists such as Ibn Al-Haytham, Al-Bīrūnī and others studied optics and mechanics as well as astronomy, and criticised Aristotle’s view of motion. During the Middle Ages, Islamic science flourished across a wide area around the Mediterranean Sea and further afield, for several centuries, in a wide range of institutions .

  • INDEX CUM CONCORDANCE for the Holy Quran ,A KEY TO HOLY QURAN

    INDEX CUM CONCORDANCE for the Holy Quran ,A KEY TO HOLY QURAN

    By: AL-HAJ KHAN BAHADUR ALTAF AHMAD KHERIE, R.A.S.(RETIRED),

    Former Member of the Board of Revenue for Rajasthan and author of

    ” The Law for the Abolition of Zamindari in Rajastan”

    Pages: 1244

    File pdf: 240MB

  • LUGHAAT UL QURAAN ALLAMA ABD U RASHEED NOUMANI AUR GHULAM AHMED PARVAIZ ASALEEB KA NAQIDNA JAIZA

    لغات القرآن ، علامہ عبدالرشید نعمانی اور غلام احمد پرویز

    لغوی اور تشریحی اسالیب کا ناقدانہ جائزہ

    (تحقیقی مقالہ برائے پی ایچ ڈی)

    مقالہ نگار : ثناء شکور لاسی

  • MAAMALAAT E INSAAN AUR QURAAN

    MAAMALAAT E INSAAN AUR QURAAN

    معاملات انسان اور قرآن

    از: قیوم نظامی

    پوسٹل چارجز لاگو ہوں گے۔

    رابطہ نمبر : 03345425788

    750.001,000.00
  • MAFAHEEM MAZAMEEN E QURAAN

    MAFAHEEM MAZAMEEN E QURAAN

    مفاہیم و مضامین قرآن تفسیر ابن کثیر کی روشنی میں

    رابطہ نمبر :03345425788

    1,500.002,000.00
  • MAULANA ASHRAF ALI THANVI K MUNTAKHIB KHUTBAAT ME TAFSEERI NUKAAT KA TAHQEEQI O TAJZIYATI MUTALA

    مولانا اشرف علی تھانوی ؒ کے منتخب خطبات میں تفسیری نکات  کا تحقیقی و تجزیاتی  مطالعہ ( جلد 1 تا 2)

    (مقالہ برائے ایم فل )

    مقالہ نگار: جمیل عالم اعوان

    MAULANA ASHRAF ALI THANVI K MUNTAKHIB KHUTBAAT ME TAFSEERI NUKAAT KA TAHQEEQI O TAJZIYATI MUTALA

    M PHIL THESIS

    RESEARCH BY: JAMEEL ALAM AWAN

    ٭ ملاحظہ کیجئے مضمون ٭
    ٭ تفسیر بیان القرآن مولانا  از:مولانا اشرف علی تھانوی ” رائے ” اور ” آثار ” کا امتزاج٭
    مضمون نگار : ڈاکٹر محمد زوہیب حنیف
    ٭ حضرت حکیم الامت  مولانا اشرف علی تھانوی کی قرآنی و علمی خدمات  پر کتب کے لیئے کلک کیجیئے ٭
  • NUKAAT E AFGHANI (ALLAMA SHAMS UL HAQ AFGHANI)

    نکات افغانی

    (شذرات : علامہ شمس الحق افغانی)

    NUKAAT E AFGHANI

    (ALLAMA SHAMS UL HAQ AFGHANI)

    ٭علامہ شمس الحق افغانی کی مزید کتب کے لیئے کلک کیجیئے٭

  • Qazi Sanaullah Panipati aur Tafseer e Mazhari ka Taarruf

    Qazi Sanaullah Panipati aur Tafseer e Mazhari ka Taarruf

    By : Dr rizwan u Deen Khan

    With additional essay

    Tafseer e Mazhari ka Naqidana Jaiza

    By : Abu Mahfoz Alkareemi Maasomi

    قاضی ثناء اللہ پانی پتی اور تفسیر مظہری کا تعارف

    تالیف : ڈاکٹر رضوان الدین خاں

    بشمولِ اضافہ

    تفسیر مظہری کا ناقدانہ جائزہ

    از : ابو محفوظ الکریمی معصومی

  • QUR’AN THE FUNDAMENTAL LAW OF HUMAN LIFE

    QUR’AN THE FUNDAMENTAL LAW OF HUMAN LIFE

    Being a Commentary of the Holy Qur’an keeping in view the

    Philosophical thought, Scientific research, Political, Economical,

    and Social developments in the human society down the ages.

    VOLUME ONE

    INTRODUCTION

    TO THE STUDY OF QUR’AN

    By: Syed Anwer Ali

    PAGES: 525

    100MB

    *The Seal Of Prophethood*

    By: Syed Anwer Ali

    * Syed Anwer Ali and his Methodological Approaches in Tafsīr “Qur’ān the Fundamental Law of Human Life

    Zonera Ghafoor / Radwan Jamal Elatrash

  • QURAAN AUR SCIENCI INKISHAFAAT

    قرآن  اور سائنسی انکشافات

    از: پروفیسر ولی رازی

    QURAAN AUR SCIENCI INKISHAFAAT

    BY : PROF WALI RAZI

    ” قرآن اور سائنس ” مزید کتب کے لیئے کلک کیجیئے

  • QURAN AUR HIDAYAT E QURAN KI JHALAK

    قرآن اور ہدایاتِ قرآن ایک جھلک

    از: مفتی زید بن عبدالرحمٰن  فلاحی پالن پوری

    QURAN AUR HIDAYAT E QURAN KI JHALAK

    BY: MUFTI ZAID BIN ABDURAHMAN

  • QURAN E AZIZ (MUTARJAM) URDU TARJUMA : SHEIKH U TAFSEER MAULANA AHMAD ALI LAHORI

    قرآن ِ عزیز (مترجم)

    اردو ترجمہ : شیخ التفسیر مولانا احمد علی لاہوری

    حاشیہ 1 :حضرت شاہ عبدالقادر محدث دہلوی،صاحبِ موضح قرآن

    حاشیہ 2 : شیخ التفسیر مولانا احمد علی لاہوری

    QURAN E AZIZ (MUTARJAM)

    URDU TARJUMA : SHEIKH U TAFSEER

    MAULANA AHMAD ALI LAHORI

    HASHIYA 1 : HAZRAT SHAH ABDUL QADIR MUHADDIZ DEHLVI

    HASHIYA 2 : SHEIKH U TAFSEER  MAULANA AHMAD ALI LAHORI

    نوٹ : امام المفسرین حضرت شاہ عبدالقادر محدث دہلویؒ کے  تفسیری حواشی اور شیخ التفسیر مولانا احمد علی لاہوریؒ کے تشریحی حواشی یکجا صرف اسی نسخہ میں شائع ہوئے تھے، بعد کے ایڈیشنز میں حضرت لاہوریؒ کے ترجمہ قرآن کے ساتھ صرف  انھی کے تشریحی نوٹس طبع کیئے گئے ، حضرت محدث دہلوی کے ” حواشی موضح قرآن ” حذف کر دئیے گئے تھے۔
    حضرت لاہوریؒ کی جدوجہد و خدمات کی ایک جھلک

    از:مولانا زاہد الراشدی

    حوالہ: روزنامہ اسلام، لاہور

    تاریخ اشاعت: ۶ دسمبر ۲۰۱۹ء

    شیرانوالہ گیٹ لاہور میں عالمی انجمن خدام الدین کا نام سامنے آتے ہی شیخ التفسیر حضرت مولانا احمد علی لاہوری قدس اللہ سرہ العزیز کی شخصیت اور ان کے تاریخی کردار کا منظر نگاہوں کے سامنے گھوم جاتا ہے اور تاریخ اپنے اوراق پلٹتی چلی جاتی ہے۔ شیخ الہند حضرت مولانا محمود حسن دیوبندی نور اللہ مرقدہ کے یہ مایہ ناز شاگرد اب سے ایک صدی قبل لاہور میں تشریف لائے تھے بلکہ انہیں اس شہر میں اس خیال سے برطانوی حکومت کی طرف سے نظربند کر دیا گیا تھا کہ تحریک آزادی کا یہ مفکر اور متحرک راہنما ایک انجانے شہر میں سرگرمیاں جاری نہیں رکھ سکے گا۔ مگر اس مرد درویش نے ایک چھوٹی سی مسجد میں خاموشی کے ساتھ اپنی تعلیمی اور اصلاحی جدوجہد کا آغاز کیا اور دیکھتے ہی دیکھتے اس کے اثرات دنیا کے مختلف اطراف تک پھیلتے چلے گئے اور آج دنیا کا کوئی براعظم ایسا نہیں جہاں شیخ التفسیر حضرت مولانا احمد علی لاہوریؒ کے شاگردوں اور ان کے شاگردوں کے تعلیمی و اصلاحی اثرات دکھائی نہ دے رہے ہوں۔ مجھے دنیا کے درجنوں ممالک میں جانے کا موقع ملا ہے اور میرے یہ بیرونی اسفار کم و بیش تین عشروں کا تسلسل رکھتے ہیں، جس کے دائرے میں ایشیا، یورپ، افریقہ اور امریکہ چاروں براعظم شامل ہیں، میں نے کم و بیش ہر جگہ حضرت مولانا احمد علی لاہوریؒ سے براہ راست یا بالواسطہ استفادہ کرنے والے دیکھے ہیں، جو اپنی اپنی جگہ ان برکات و فیوض کو پھیلانے میں مصروف ہیں۔

    حضرت لاہوریؒ اصلاً حضرت شیخ الہندؒ کی اس تحریک کے باشعور اور باہمت راہنما تھے جس کا بنیادی ہدف استعماری نظام اور قوتوں سے وطن عزیز اور عالم اسلام کی گلوخلاصی کرانا اور امام ولی اللہ دہلویؒ کے فلسفہ و حکمت کی روشنی میں پوری دنیا کی ایک متوازن، فطری اور قابل عمل نظام کی طرف راہنمائی کرنا ہے۔ حضرت لاہوریؒ نے اس کے لیے لاہور میں انجمن خدام الدین کی بنیاد رکھی اور قرآن کریم کے ترجمہ و تفسیر کو باقاعدہ تعلیمی نظام کے طور پر رائج کرنے کے علاوہ امام ولی اللہ دہلویؒ کی مایہ ناز تصنیف “حجۃ اللہ البالغہ” سے اہل علم کو روشناس کرانے کی محنت شروع کر دی۔ اس کے نتائج و اثرات کا احاطہ اس مختصر کالم میں ممکن نہیں ہے، البتہ مثال کے طور پر اتنی بات عرض کر دینا ضروری سمجھتا ہوں کہ میں نے مغرب کی انتہا امریکہ اور مشرق کی انتہا ہانگ کانگ و ملائیشیا میں حضرت مولانا عبید اللہ سندھیؒ اور حضرت مولانا احمد علی لاہوریؒ کی طرز پر قرآن کریم اور حجۃ اللہ البالغۃ کے حوالہ سے علمی و فکری کام ہوتے دیکھا ہے۔

    حضرت مولانا احمد علی لاہوریؒ کی خدمات کا ایک دائرہ پاکستان میں نفاذ اسلام اور تحفظ ختم نبوت کی تحریکات بھی تھا، اور وطن عزیز میں انکار حدیث کے فتنہ کے تعاقب کے لیے بھی ان کی جدوجہد سب سے نمایاں رہی ہے۔ انہوں نے علماء کرام کی ایک بڑی اور تاریخی جماعت جمعیۃ علماء اسلام کی تشکیل نو کی سرپرستی کی اور الحاد و تجدد کے بہت سے رجحانات کے سامنے سد سکندری ثابت ہوئے۔ وہ بزرگ عالم دین، شیخ کامل، باشعور راہنما، اور متحرک قائد ہونے کے ساتھ ساتھ دینی تحریکات کے کارکنوں کے لیے سرپرست کی حیثیت رکھتے تھے، کارکنوں کی نہ صرف حوصلہ افزائی فرماتے تھے بلکہ خود بھی عملی محنت میں پیش پیش رہتے تھے۔

    دینی تحریکات کے حوالہ سے حضرت لاہوریؒ کے ذوق و کردار کی ایک جھلک اس واقعہ میں دیکھی جا سکتی ہے جو ابھی چند روز قبل مسجد حرام مکہ مکرمہ کے مدرس فضیلۃ الشیخ مولانا محمد مکی حجازی حفظہ اللہ تعالٰی نے اپنے درس میں بیان فرمایا ہے کہ ۱۹۵۳ء کی تحریک ختم نبوت میں ممتاز شیعہ راہنما سید مظفر علی شمسی گرفتار ہو کر چند ماہ جیل میں رہے اور جب رہا ہو کر وہ گھر پہنچے تو انہیں سب سے زیادہ فکر اس بات کی تھی کہ ان کی غیر موجودگی میں ان کے گھر کا خرچہ کیسے چلتا ہوگا؟ مگر انہیں گھر جا کر معلوم ہوا کہ لاہور کے ایک بزرگ ان کے گھر راشن پہنچاتے رہے ہیں، بعد میں پتہ چلا کہ وہ شیخ التفسیر حضرت مولانا احمد علی لاہوریؒ تھے۔ شمسی صاحب ان کی خدمت میں اظہار تشکر کے لیے حاضر ہوئے تو حضرت لاہوریؒ نے فرمایا کہ آپ لوگ ختم نبوت کے تحفظ کے لیے جو قربانیاں دے رہے ہیں، ان پر ہمارا یہ حق تو بنتا ہے کہ ہم آپ لوگوں کے گھروں کی دیکھ بھال کریں۔

    یہ حضرت لاہوریؒ کے کردار کی ایک ہلکی سی جھلک ہے، آج جب ان کی جماعت اپنی خدمات کا تسلسل جاری رکھے ہوئے ہے تو دیکھ کر خوشی ہوتی ہے اور ان کے ساتھ اپنے توسل و تعلق پر بجا طور پر فخر محسوس ہوتا ہے، اللہ تعالٰی اس اجتماع کو کامیابی اور ثمرات سے بہرہ ور فرمائیں، آمین یا رب العالمین۔(اقتباس)

    “پیشکش طوبیٰ: شیخ التفسیر مولانا احمد علی لاہوری کی قرآنی فکر و سوانح”

    قرآنیات کے شائقین کے لیئے انمول تحفۃ

     مستند موضح قرآن

    ترجمہ و حاشیہ : حضرت شاہ عبدالقادر محدث دہلوی ؒ

    تحقیق و تصحیح : علامہ اخلاق حسین قاسمی ؒ

  • Quran Majeed K Urdu Tarajim O Tafaseer Ka Tanqeedi Mutalea 1914 Tk

    قرآن مجید کے اردو تراجم و تفاسیر کا تنقیدی مطالعہ 1914ء تک

    (پی ایچ ڈی مقالہ)

    مقالہ نگار : ڈاکٹر  سید حمید شطاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

    Quran Majeed K Urdu Tarajim O Tafaseer Ka Tanqeedi Mutalea 1914 Tk

    (Phd Thesis )

    Research By : Dr Syed Hameed Shattari

    Special courtesy : Zafar Ahmed Rana

  • Rooh ul Quran (Tafseer Surah Fatiha wa Baqarah )

    روح القرآن

    (تفسیر سورہ فاتحہ و بقرہ)

    مفسر: مولانا عبدالسلام قدوائی ندوی

    Rooh ul Quran

    (Tafseer Surah Fatiha wa Baqarah )

    Muffasser : Maulana AbdusSalam Qudwai Nadvi

  • Sindh mein Arabi, Farsi, Urdu, aur English Sindh mein ke Qurani Tarajim aur Tafaseer ka Tehqiqi Jaiza

    سندھ میں عربی، فارسی، اردو، انگریزی سندھ میں کے قرآنی تراجم و تفاسیر کا تحقیقی جائزہ

    (پی ایچ ڈی مقالہ)

    مقالہ نگار :حافظ منیر احمد خان

    ۱۴۱۸ھ – 1997ء

    نگران :پروفیسر عبدالرزاق میمن

    شعبہ ثقافت اسلامی و تقابل ادیان – سندھ یونیورسٹی – جام شورو

    Sindh mein Arabi, Farsi, Urdu, aur English Sindh mein ke Qurani Tarajim aur Tafaseer ka Tehqiqi Jaiza

    (PHD: THESIS)

    RESEARCH BY : Hafiz Munir Ahmed Khan

    1418 Hijri – 1997 AD

    Shuba-e-Saqafat-e-Islami aur Taqabul-e-Adyan – Sindh University – Jamshoro

  • SOME RHETORICAL FEATURES OF THE QURAN

    SOME RHETORICAL FEATURES OF THE QURAN

    Author: Muhammad al-Ghazali

    By: TOOBAA FOUNDATION

    Some Rhetorical Features of The Quran:
    An Introduction to the Early Development of Ma‘ni
    ———————————–
    مباحث کا مختصر تعارف
    —————————
    یہ ڈاکٹر محمد الغزالی کی کتاب ہے جو ادارہ تحقیقات اسلامی سے شائع ہوئی تھی اور قرآنِ کریم کے بلاغی اعجاز پر بحث کرتے ہوئے علمِ معانی کے باب میں مسلم علما کی ابتدائی دور کی کاوشوں کو نمایاں کرنے کے لیے قلم بند کی گئی ہے۔مصنف اس کی تالیف کی غرض و غایت بیان کرتے ہوئے تحریر کرتے ہیں:
    What we have attempted to pursue here is simply to find an answer to the following question: ‘what features of the Qur’anic text were found by our classic scholars to be constitutive of its miraculous status?
    (ہماری کاوش اس سوال کا جواب دینا ہے کہ ہمارے قدیم علما نے نصِ قرآنی کے وہ کون سے پہلو دریافت کیے جو اس کی اعجازی شان کی بنیاد ہیں؟)
    کتاب کے پانچ ابواب اور ایک خاتمہ ہے جن کی تفصیل حسبِ ذیل ہے:
    بابِ اول : قرآنِ کریم کے ادبی مطالعات کا ایک تعارف
    بابِ دوّم : بلاغت کا نظری نقشہ
    بابِ سوّم : بلاغت کا کلاسیکی دور: چند بنیادی کاوشیں
    بابِ چہارم : علمِ معانی کے مخصوص اصول
    بابِ پنجم : بلاغی بحث کا ذروۂ سنام
    نتائجِ بحث
    پہلے باب میں قرآنِ کریم کے اعجاز کے حوالے سے عربی زبان وادب کے خزانۂ عامرہ میں مسلمانوں کے عظیم الشان حصے پر گفت گو کی گئی ہے اور عہدِ تدوین میں جو ذخیرہ وجود میں آیا، اس میں سے اہم کتابوں کا تعارف کروایا گیا ہے جو عربی زبان اور خاص طور پر قرآنی بلاغت کے باب میں اہم شمار ہوتی ہیں۔
    مصنف نے لکھا ہے کہ قرآنِ کریم کے اعجاز کا تصور صحابہ کرام میں موجود تھا ، لیکن بعد کے علما نے اس فن کو مربوط انداز میں بیان کیا ہے۔ اس فن کے نشو وارتقا کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ ’اعجاز‘ یا ’معجزہ‘ کے الفاظ شروع میں مستعمل نہ تھے، بلکہ دوسری یا تیسری صدی کے آغاز میں متکلمین کے ہاں نمایاں ہوئے۔قرآن اس مقصد کے لیے آیت کا لفظ بولتا ہے۔اعجازِ قرآن پر تصانیف کے سلسلے کا پہلا کام محمد بن یزید واسطی کا إعجاز القرآن کی شکل میں ہے۔ علمِ تفسیر کے ارتقا کے ساتھ اعجازِ قرآن کی بحثوں میں مزید پھیلاؤ پیدا ہوا۔ دوسری صدی میں قرآن کے ادبی اور لغوی پہلو پر زیادہ توجہ دی گئی اور چوتھی صدی اس تشکیلی دور کا ذروۂ سنام ہے۔اس دور میں مصنفین نے عربوں کے طے کردہ معیاراتِ شعر ونثر پر خصوصیت سے توجہ دی اور معانی، بیان اور بدیع کی اصطلاحات استعمال کی گئیں۔اس عہد کے مصنفین میں ابو ہلال عسکری، ابن سنان خفاجی، عبدالقاہر جرجانی، جاراللہ زمخشری، عبداللہ ابن المعتز، قدامہ بن جعفر اور ابنِ رشیق قیروانی ہیں۔ مصنف نے اس باب میں سَکَّاکی، جُرجانی، رُمّانی، باقِلّانی، جاحظ، رازی اور دیگر حضرات کے علمی کام کا ذکر کیا ہے۔
    تیسرے باب (بلاغت کا کلاسیکی دور: چند بنیادی کاوشیں) میں مصنف نے بالترتیب جرجانی، باقلانی، خطابی، رمانی، زَمَخْشَری، رازی اور سکّاکی پر گفت گو کی ہے۔اس گفت گو میں باقلانی کا ذکر خطابی سے پہلے آیا ہے، جب کہ وہ زمانی ترتیب کے لحاظ سے بعد میں ہیں اور سابق مصنفین کے کام سے استفادہ کرتے ہوئے انھوں نے اس بحث کو مزید آگے بڑھایا ہے۔اگرچہ مصنف نے لکھا ہے کہ :
    Though chronologically he [al-khattabi, d. 388 AH] is prior to al-Baqillani but in terms of impact and influence, the latter is more prominent. Hence he was mentioned first.
    (اگرچہ تاریخی ترتیب کے لحاظ سے وہ (خطابی ) باقلانی سے مقدم ہیں، لیکن اثرانگیزی کے اعتبار سے ثانی الذکر زیادہ معروف ہیں، اس لیے انھیں پہلے ذکر کیا گیا ہے۔)
    تاہم کتاب کے ذیلی عنوان (The Early Development of Maani) کے پیشِ نظر یہی مناسب معلوم ہوتا ہے کہ خطابی کا ذکر باقلانی سے پہلے آتا، کیوں کہ کسی چیز کا ارتقائی اور تدریجی مطالعہ تاریخی ترتیب سے کرنا زیادہ انسب ہے تاکہ یہ بات واضح ہو سکے کہ کس دور میں کسی خاص فکر کے کیا خدوخال رہے ہیں اور بعد والوں نے پہلے لوگوں کی تحقیق کو کن زاویوں سے آگے بڑھایا۔
    کتاب کا چوتھا اور پانچواں باب فنِ بلاغت کی تاریخ کے بیان کے بعد بلاغت کے مباحث سے متعلق ہیں۔ چوتھے باب (علمِ معانی کے مخصوص اصول) میں فصاحت وبلاغت کی تعریفات اور بلاغتِ کلمہ کے مفہوم کو واضح کیا گیا ہے، جب کہ پانچویں باب (بلاغی بحث کا ذروۂ سنام) میں علمِ معانی میں زیرِ بحث آنے والے جملہ امور ( اخبار وانشا، قِصَر، فصل و وصل، ایجاز، اطناب، مساوات) پر جامع گفت گو کی گئی ہے۔ ان مباحث کی وضاحت میں زیادہ تر مثالیں قرآنی نصوص سے اور کہیں کہیں عربی اشعار سے دی گئی ہیں۔کتاب کے جملہ مباحث عربی کتب میں مل جاتے ہیں، تاہم انگریزی زبان کے قاری کے لیے یہ کتاب علمِ بلاغت کی تاریخ اور علمِ معانی کے نمایاں مباحث کے تعارف کے لیے عمدہ ہے، البتہ اس بات کا احساس ہوتا ہے کہ انگریزی زبان کے قاری کے لیے مسلم روایت میں پروان چڑھنے والے علوم کو معاصر فکر کی کوکھ سے پھوٹنے والے جدید علوم کے تناظر میں پیش کیا جائے۔ چناں چہ علمِ معانی کی بحث کو Semantics اور Semeiotics کے مباحث کے ساتھ مربوط کر کے انگریزی قاری کو یہ دکھانے کی ضرورت ہے کہ کس طرح عربوں نے ان فنون کو اتنے مربوط انداز میں پیش کیا ہے کہ لسانیات کی یہ جدید شاخیں ان سے استناد سے مستغنی نہیں ہو سکتیں۔
    پہلے یہ بات ذکر ہوئی ہے کہ مصنف کے نزدیک اس کتاب کی غرض وغایت یہ ہے:
    What we have attempted to pursue here is simply to find an answer to the following question: ‘what features of the Quranic text were found by our classic scholars to be constitutive of its miraculous status?
    (ہماری کاوش اس سوال کا جواب دینا ہے کہ ہمارے قدیم علما نے نصِ قرآنی کے وہ کون سے پہلو دریافت کیے جو اس کی اعجازی شان کی بنیاد ہیں؟)
    تاہم یہ کتاب علمِ معانی کے مباحث تک محدود ہے اگرچہ قرآنی اعجاز کے بیان میں علم بیان کا حصہ بھی کچھ کم نہیں ہےاسے بھی کتاب کا حصہ بنایا جاتا تو بہتر ہوتا۔اسی طرح علم بدیع کی گل کاریاں بھی کلام کو ایک حسن بخشتی ہیں۔ ان پر بھی ایک طائرانہ نظر ہونی چاہیے تھی۔
  • SUJECT INDEX OF QURAAN

    SUJECT INDEX OF QURAAN

    BY: AFZALUR RAHMAN

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 10

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 10

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 10

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 11

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 11

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 11

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 12

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 12

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 12

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 13

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 13

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 13

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 14

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 14

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 14

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 15

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 15

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 15

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 16

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 16

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 16

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 17

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 17

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 17

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 18

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 18

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 18

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 19

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 19

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 19

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 20

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 20

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 20

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 21

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 21

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 21

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 22

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 22

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 22

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 23

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 23

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 23

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 24

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 24

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 24

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 26

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 26

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 26

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 27

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 27

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 27

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 28

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 28

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 28

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 29

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 29

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 29

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 30

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 30

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 30

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 4

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 4

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 4

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 5

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 5

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 5

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن

  • TAFSEER BAYAN U SUBHAAN PARA NO : 6

    TAFSEER BAYAN U SUBHAAN

    PARA NO : 6

    AUTHOR : MAULANA SYED ABD U DAIM ALJALALI BUKHARI

    تفسیر بیان السبحان

    پارہ : 6

    مفسر : مولانا سید عبدالدائم الجلالی بخاری

    پیشکش : طوبیٰ فاؤنڈیشن